Poetry Status

Best Collection Of Allama Iqbal Poetry

Allama Muhammad Iqbal Poetry

Allama Muhammad Iqbal is one of the best World Wide Known Poet. Allama Muhammad Iqbal Poetry directly hit our heart and give us a unique feeling when we read Allama Iqbal Poetry we inspired what he says and when we have to do. He is a great poet Of Pakistan. Inspired By Allama Muhammad Iqbal We are now going to offer the best collection of Allama Iqbal Poetry on all topics like youth, Islam, inspirational poetry and Much more. Allama Muhammad Iqbal poetry is translated into many languages all over the world. people Love there work and appreciate. All the People from the world like to read their Poetry and make it it’s own WhatsApp status that why we give you fresh material at all-new poetry pictures and also in written form so go and make it your status.  Check Out Some Happy New Year 2020 Status Line.

In This Website, You will get a lot of Free Whatsapp status videos, Quotes Pictures, Simple Quotes, Motivational Quotes, Love Poetry and much more So stay tuned with us we upload new content all the 7 days in a week. So let’s go and grab some fresh data for your WhatsApp status 

“Aankg Jo Kuch Dekhti Hai Lab Pe Aa Sakta Nahi
Mahv-e-Hairat Hun Keh Dunya Kya Se Kya Ho Jaye Gi” 

“Dil Se Jo Baat Nikalti Hai, Asar Rakhti HaiPar Nahin, Taaqat-e-Parwaaz Magar Rakhti Hai”

“Han Dikha De Ae Tasuwar Phir Wo Subah Sham Tu
Dor Peche Ki Taraf Ae Gardish-E Ayam Tu”

“Prindon ki dunya ka darwaish hoon MainKe Shaheen Bnata Nahi Aashiyana”

“Ye Moj-e-Nafs Kya Hai… Talwar Hai
Khudi Kia Hai, Talwar Ki Dhar Hai

“Zindagi Kuch Aur Shay Hai… ilm Hai Kuch Aur Shay Zindagi Soz-e-Jigar Hai….ilm Hai Soz-e-Dimag”

Parwaaz Hai Dono Ki Isi Aik Fiza Mein,
Kargis Ka Jahan Aur Hai Aur Shaheen Ka Jahan Aur,
Ilfaz o Muani Me Tafawat Nahi Lekin,
Mulla Ki Azaan Aur, Mujahid Ki Azaan Aur

چھوٹے سے چاند میں ہے ظلمت بھی روشنی بھی

نکلا کبھی گہن سے آیا کبھی گہن میں

ALLAMA MUHAMMAD IQBAL DEFINE LOVE:-

محبت

عروس شب کی زلفیں تھیں ابھی ناآشنا خم سے

ستارے آسماں کے بے خبر تھے لذت رم سے

قمر اپنے لباس نو میں بیگانہ سا لگتا تھا

نہ تھا واقف ابھی گردش کے آئین مسلم سے

ابھی امکاں کے ظلمت خانے سے ابھری ہی تھی دنیا

مذاق زندگی پوشیدہ تھا پہنائے عالم سے

کمال نظم ہستی کی ابھی تھی ابتدا گویا

ہویدا تھی نگینے کی تمنا چشم خاتم سے

سنا ہے عالم بالا میں کوئی کیمیا گر تھا

صفا تھی جس کی خاک پا میں بڑھ کر ساغر جم سے

لکھا تھا عرش کے پائے پہ اک اکسیر کا نسخہ

چھپاتے تھے فرشتے جس کو چشم روح آدم سے

نگاہیں تاک میں رہتی تھیں لیکن کیمیا گر کی

وہ اس نسخے کو بڑھ کر جانتا تھا اسم اعظم سے

بڑھا تسبیح خوانی کے بہانے عرش کی جانب

تمنائے دلی آخر بر آئی سعی پیہم سے

پھرایا فکر اجزا نے اسے میدان امکاں میں

چھپے گی کیا کوئی شے بارگاہ حق کے محرم سے

چمک تارے سے مانگی چاند سے داغ جگر مانگا

اڑائی تیرگی تھوڑی سی شب کی زلف برہم سے

تڑپ بجلی سے پائی حور سے پاکیزگی پائی

حرارت لی نفس ہائے مسیح ابن مریم سے

ذرا سی پھر ربوبیت سے شان بے نیازی لی

ملک سے عاجزی افتادگی تقدیر شبنم سے

پھر ان اجزا کو گھولا چشمۂ حیواں کے پانی میں

مرکب نے محبت نام پایا عرش اعظم سے

مہوس نے یہ پانی ہستئ نوخیز پر چھڑکا

گرہ کھولی ہنر نے اس کے گویا کار عالم سے

ہوئی جنبش عیاں ذروں نے لطف خواب کو چھوڑا

گلے ملنے لگے اٹھ اٹھ کے اپنے اپنے ہم دم سے

خرام ناز پایا آفتابوں نے ستاروں نے

چٹک غنچوں نے پائی داغ پائے لالہ زاروں نے

علامہ محمد اقبال

Comments (1)

  1. همه پستات لایک داره

Comment here